آئی ایم ایف نے آخر میں پاکستان کیلئے 6 ارب ڈالر کا پیکیج منظور کیا

بدھ کو بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے پاکستان کے لئے 6 بلین روپے کی ضمانت کے پیکیج کو منظوری دی ہے جب ملک لچکدار تبادلے کی شرح کو نافذ کرنے پر اتفاق کرتا ہے، ٹیکس اور اختتامی سرکلر قرض کو بڑھانے کے لئے، جس میں دو درجن درجن پروگراموں کو فائدہ اٹھانے کے باوجود بے چینی نہیں ہے.

آئی ایم ایف کو فوری طور پر $ 1 بلین روپے کا مجموعی پیکج $ 1 بلین روپ سے نکال دیا جائے گا. عالمی قرض دہندہ کی جانب سے ایک اعلان کے مطابق، باقی $ 5 ارب سہ ماہی اور نصف جائزے کے کامیاب تکمیل سے منسلک کیا جائے گا.

آئی ایم ایف ایگزیکٹو بورڈ نے پاکستان کے لئے توسیع فنڈ سہولت کے تحت 39 مہینہ توسیع کا انتظام منظوری دے دی ہے تاکہ ایس ڈی آر کے لئے 4.3 ارب یا تقریبا 6 ارب بلین روپے یا حکام کے اقتصادی اصلاحاتی پروگرام کی حمایت کے لئے 210 فیصد کوٹ.

پاکستان نے پہلے سے ہی آئی ایم ایف کو تقریبا 5.9 بلین روپے قرض دیا ہے اور ان میں سے 750 ملین ڈالر نئے مالی سال 2019-2020 میں واپس آئیں گے. آئی ایم ایف کے پروگرام کے عمل پر پہلی جائزہ کا جائزہ اکتوبر میں منعقد ہوسکتا ہے جس میں آئی ایم ایف جولائی-ستمبر 2019 کی مدت کے لئے متفقہ اہداف پر کارکردگی کا اندازہ کرے گا.

ایگزیکٹو بورڈ نے اس اجلاس کو منظوری دے دی جو واشنگٹن میں منعقد ہوئی تھی. یہ خیال ہے کہ تمام 22 قرضوں میں سب سے مشکل پیکیج ہے جو پاکستان اور آئی ایم ایف نے ابھی تک دستخط کیے ہیں.

آئی ایم ایف پروگرام پر عملدرآمد نگرانی کرے گی چار سہ ماہی جائزے اور چار نصاب جائزہ کے ذریعہ یہ کہ پاکستان طاہرکاسف کی حکومت کو سخت جگہ میں رکھیں گے.

سہ ماہی آمدنی کے ذخائر کے مقاصد کو حاصل کرنے میں ناکامی حکومت کو ٹیکس کے اقدامات کے لۓ آئی ایم ایف کے دباؤ میں بے نقاب کرے گی. ایف بی آر کے ٹیکس سے جی ڈی پی کا تناسب پچھلے مالی سال کے اختتام میں جی ڈی پی کے پانچ فیصد کم سے کم ہے.

جی ڈی پی کے 9.9 فیصد سے، ایف بی آر کو ایک سال کے اندر 12.6٪ کا تناسب بڑھانا پڑے گا، جس میں آئی ایم ایف پروگرام کا ایک اہم ہدف ہے.

آئی ایم ایف کے پروگرام کے تحت، حکومت دسمبر 2020 تک 1.4 ٹریلین روپے کی سرکلر قرض کو ختم کرنے کے پابند ہوں گے. حکومت نے پہلے سے ہی بجلی کی قیمتوں میں دو گنا اضافہ کیا ہے. یہ ایک رجحان ہے جسے اب سہ ماہی پر جاری رکھا جائے گا.

حکومت ایس بی پی کو خودمختاری کی ضمانت دے گی اور غیر ملکی کرنسی کی نقل و حرکت پر کمپنیوں کی جانب سے منافع کی غیر ملکی واپسیوں پر پابندی کو ختم کرنے سے زیادہ آزادی ہوگی. مالیاتی وزارت کے وفد ڈاکٹر خاق نجیب نے کہا، “آئی ایم ایف کے پروگرام میں زیادہ غیر ملکی براہ راست سرمایہ کاری، ترسیلات اور برآمدات کو یقینی بنایا جائے گا جو قرض سازی کے آلات پر پاکستان کے انحصار کو کم کرے گا.”

Farukh Tariq

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *