اسلام آباد میں پاکستان، ایران کے سرحدی تعاون

خارجہ آفس نے جمعرات کو کہا کہ پاکستان-ایران کے ہائی حدڈ کمیشن کا دوسرا دور اسلام آباد میں منعقد ہوا تھا تاکہ سرحدی تعاون کو بڑھانے کے طریقوں کو تلاش کریں.

پاکستان کے وفد کے سربراہ افغانستان، ڈائریکٹر جنرل، ایران اور ترکی کے سربراہ زاہد حفیظ چوہدری کی سربراہی میں تھے جبکہ ایران کے ڈائریکٹر جنرل بین الاقوامی قانونی معاملات عباس بیگفر پور آردیکانی نے ان وفد کی قیادت کی.

پڑوسیوں نے سرحدی نقشوں کے ساتھ ساتھ سرحدی ستون کی تفصیلات کو اپ ڈیٹ کرنے اور مشترکہ سرحدی سروے کو لے جانے کی ضرورت پر زور دیا.

سرکاری بیان میں کہا گیا کہ اجلاس کے دوران دونوں اطراف نے متعلقہ فریم ورک کے اندر موجود موجودہ سرحدی مکانات کے مؤثر عمل کے لئے تخلیقی مباحثے منعقد کیے ہیں جن میں 1960 اور پاکستان کی سرحد کی انتظامیہ کے معاہدے بھی شامل ہیں.

اسلام آباد اور تہران نے دونوں علاقوں کے ساتھ باہمی تعاون کو فروغ دینے پر بھی اتفاق کیا کہ دونوں اطراف نئے سرحدی پار کرنے والے پوائنٹس کو کھولنے کے لئے اپنے وعدے کی توثیق کرتے ہیں.

ایچ بی بی دونوں ممالک کے درمیان مشاورت کے لئے ایک میکانیزم ہے جس میں مختلف سطحوں پر بہتر تعاون کے لۓ تمام سرحدی متعلقہ مسائل پر بات چیت کی جائے گی. کمشنر کا پہلا اجلاس دو سال پہلے دریافت کیا گیا تھا.

دوسرا سیشن اس سال اپریل میں وزیراعظم عمران خان کے دورے کے دوران دونوں ممالک کی قیادت کے فیصلے کی پیروی کے طور پر منعقد ہوا. دونوں ممالک 900 سے زائد کلومیٹر لمبی سرحد کا حصہ ہیں.

Share On

Farukh Tariq

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *