آج پاکستان کو آئی ایم ایف سے 1 ارب ڈالر ملنے کا موقع ملے گا

پاکستان نے آج ہی 6 ارب بلین بلائی آؤٹ پیکج کے تحت بین الاقوامی مالیاتی فنڈ سے 1 بلین ڈالر کی قسط وصول کی ہے.

پیر کے روز ایک نیوز کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے، آئی آر ایف کے سربراہ ملک کے ملک کے سربراہ ارنوسٹ رامیرز-رگو نے کہا کہ پاکستان کے لئے بیل آؤٹ پیکیج کا مقصد ملک کی معیشت اور اداروں کی استحکام ہے.

“پاکستان نے اقتصادی اصلاحات کے حوالے سے بہت زیادہ توجہ دیا ہے، یہ معیشت کو مستحکم کرنے کے لئے ٹیکس جمع کرنے کے لئے یہ ضروری تھا.

رامیرز ریلو نے بتایا کہ یہ بیلیل پیکج کے سلسلے میں واضح تھا کہ پاکستان اقتصادی نظم و ضبط پر عمل درآمد کرے گی.

آئی ایم ایف کے مشن کے سربراہ نے نوٹ کیا کہ ریاستی اداروں کو نقصان یا منافع پر چلانے کے لئے چاہے حکومت کی ضرورت تھی، لیکن اداروں کے بوجھ کو نجات سے بچنے کے لۓ ختم ہو جائے گا اور غیر ٹیکس آمدنی میں اضافہ ہو گا.

صوبوں، رامیرز رگو نے وضاحت کی، 5.5 ٹریلین روپے کے ٹیکس جمع کرنے میں ان کی کردار ادا کرنے کی ضرورت تھی کیونکہ 57 فیصد ٹیکس آمدنی صوبوں کو فراہم کی گئی تھی.

ٹیکس مجموعہ اقتصادی ترقی میں ترجمہ کرتا ہے اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے لئے خودمختاری اقتصادی کارکردگی میں شفافیت کے لئے اہم تھا، انہوں نے کہا.

یہ قابل ذکر ہے کہ بدھ کو آئی ایم ایف کے ایگزیکٹو بورڈ نے پاکستان کو 6 بلین ڈالر کی مالیت کے تین سالہ بیل آؤٹ پیکیج کا منظوری دی تھی.

آئی ایم ایف کے ترجمان، جیری رائس نے ٹویٹر پر خبر کی تصدیق کی، “آئی ایم ایف ایگزیکٹو بورڈ نے آج پاکستان کی اقتصادی منصوبہ کی حمایت کے لئے 6 ارب امریکی ڈالر کی منظوری دے دی، جس کا مقصد ملک کی معیشت میں پائیدار ترقی کو بہتر بنانے اور معیاروں کو بہتر بنانے کا مقصد ہے. زندہ.”

اس کے علاوہ، ایشیائی ترقیاتی بینک نے پیر کے روز اگلے پانچ سالوں کے دوران مختلف ترقیاتی منصوبوں اور پروگراموں کے لۓ 10 بلین ڈالر کی مالیت کے اشارے کے ساتھ پاکستان کی مدد کرنے کی منصوبہ بندی کا اعلان کیا. انہوں نے کہا کہ ایڈ ڈی بی نے پیر کے روز پاکستان کی حکومت کے ساتھ مشورے کی ایک سلسلہ منعقد کی جس میں “نئی ملک شراکت داری کی حکمت عملی تیار کی جائے گی جس سے ملک میں 2020 سے 2024 تک ای ڈی بی کی مشغولیت کا اہتمام کیا جائے گا”.      

Share On

Farukh Tariq

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *