وزیراعظم نے بینامی اثاثوں پر بڑے پیمانے پر کریکشن کا حکم دیا

وزیراعلی عمران خان نے جمعہ کو وفاقی بورڈ آف ریونیو (ایف بی بی) کو بینامی اثاثوں کے ہولڈرز پر بڑے پیمانے پر کریکشن شروع کرنے کا حکم دیا.

تاہم، انہوں نے ایف بی آر سے کہا کہ کاروباری برادری اور صنعت کاروں کو نقصان پہنچا نہيں بلکہ ان کے تعاون کے بجائے ملک کو موجودہ مالي بحران سے نجات حاصل نہيں.

وزیراعظم نے ایف بی آر کے چیئرمین شببار زدی کو ہدایت کی کہ اگلے دو دنوں میں لاہور اور فیصل آباد کے کاموں اور صنعتوں کے چیمبروں کے ساتھ ملاقات کریں اور کاروباری برادری کو حکومت کی اصلاحات کے منصوبے پر یقین رکھے.

مسٹر خان نے کہا کہ ان لوگوں نے جنہوں نے حکومت کے ٹیکس عدم استحکام اسکیم کے تحت اپنے بینامی اثاثوں کا اعلان نہیں کیا تھا آنے کے لئے آنے والے دنوں میں کام میں لے جایا جائے گا. انہوں نے کہا کہ حکومت عوام اور کاروباری برادری کے مسائل سے آگاہ کرنے سے متعلق واقفیت سے آگاہ کرتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ ایف بی بی میں اصلاحات کے عمل لوگوں کے خدشات کو حل کرنے کے لئے زیر عمل ہیں.

وزیراعلی نے اس موقع پر اعلان کیا کہ وہ 11 جولائی کو اپنی معاشی ٹیم کے ساتھ کراچی سے ملاقات کریں گے تاکہ کاروباری برادری کو حکومت کے اصلاحاتی ایجنڈا پر یقین رکھے.

وزیراعظم نے ایم ایم اے جمشید تھامس کی قیادت میں بشپس کے ایک وفد سے بھی ملاقات کی اور ان کے ساتھ عیسائی کمیونٹی سے متعلق معاملات پر تبادلہ خیال کیا. وفد کے اراکین نے پاکستان کیتھولک بشپس کے صدر آرکبیسپ جوزف ارشاد شامل تھے؛ آرکائیوپپ سیبسٹین فرانسس شا، لاہور کے آربرشپ؛ بش بینی ٹریواس، ملتان کے بپتسمہ؛ بش انڈریاہ رحمت، فیصل آباد کے بشمول اور جان فلپ.

وزیر اعظم نے اقلیتی کمیونٹی کا سامنا کرنا پڑا مسائل کو حل کرنے کے لئے ہر ممکن کوشش کرنے کے لئے اپنی حکومت کے عزم کا اعادہ کیا. وفد نے پاکستان کیتھولک بشپس کانفرنس کے ذریعہ دیامر بھاشا اور مہمند ڈیم فنڈز کے لئے وزیر اعظم کو 5.65 ملین کی چیک پیش کی. اسلام آباد، راولپنڈی، کراچی، لاہور، فیصلآباد، حیدرآباد اور کوئٹہ – یہ رقم سات کیتھولک ڈایکسوں کا ایک حصہ ہے.

Farukh Tariq

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *